کتاب بینی کے سائنسی فوائد

 کتاب بینی کے سائنسی فوائد

کتب بینی کے سائنسی فوائد


دنیا بھر میں کامیاب ترین لوگ اپنے فارغ وقت میں جن مشاغل کو اختیارکرتے ہیں ان میں کتب بینی سر فہرست ہے۔
 تقریباً تمام ہی مہذب اقوام میں کتاب پڑھنے کا رجحان پایا جاتا ہے جو ان علمی استعداد بڑھانے کے ساتھ کئی جسمانی فوائد بھی فراہم کرتا ہے۔

کتاب پڑھنے سے  دماغی طاقت اور یادداشت بڑھتی ہے

  نیورولوجی میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق، عمر کے ساتھ ساتھ یادداشت اور دماغی افعال میں میں کمی آتی ہے، لیکن باقاعدگی سے پڑھنے سے اس عمل کو سست کرنے میں مدد مل سکتی ہے
بلا ناغہ یعنی باقاعدگی سے کتاب پڑھنا آپ کو ہوشیار بنانے کے ساتھ دماغی طاقت کو بھی بڑھاتا ہے۔

 جس طرح چہل قدمی یا کوئی بھی ورزش قلبی نظام کے لیے مفید ہے..... اسی طرح باقاعدگی سے کتاب  پڑھنا بھی دماغ کے لیے ورزش ہے جو یادداشت کے افعال کو بہتر بنانے میں معاون ثابت ہوتی ہے۔
 
کتاب پڑھنے سے یقینی  طور پریاداشت بہتر ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جب بھی صحت مند عادات کے بارے میں بات کی جاتی ہے تواس فہرست میں  کتاب پڑھنا بھی شامل ہے۔

آپ جتنا پڑھے گے اتنی ہی آپ کی معلومات میں اضافہ ہوگا۔

جس طرح کسی جگہ کی سیر کرنے سے ان مقامات کے بارے یں آگاہی حاصل ہوتی ہے بلکل اسی طرح کتاب بھی آپ کو اسی طرح مختلف معلومات فراہم کرتی ہے جوگھر بیٹھے آپ کو دنیا کی اقوام اور علوم سے روشناس کرواتی ہے۔

چھوٹی عمر میں کتاب پڑھنے سے ایک جانب تو ذخیرہ الفاظ میں اضافہ ہوتا ہے دوسری جانب یہ آپ کی ذہانت کو بھی بڑھاتا ہے۔

پڑھنے سے ہمدردی کا جذبہ پیدا ہوتا ہے

ایک اچھی کتاب پڑھنا آپ کے لیے دوسروں سے تعلق قائم کرنے کے عمل کو آسان بنا سکتا ہے۔

 سائنس میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق، ادبی فکشن، خاص طور پر، اپنے قارئین کو یہ سمجھنے میں مدد فراہم کرتا ہے کہ دوسرے لوگوں کے جذبات کو پڑھ کر آپ کیا سوچ رہے ہیں۔
ادبی فکشن پڑھنے والوں پر اس کا اثر بہت زیادہ ہوتا ہے ان لوگوں کے مقابلے جو نان فکشن پڑھتے ہیں۔ “دوسروں کی ذہنی حالتوں کو سمجھنا ایک اہم ہنر ہے جو پیچیدہ سماجی تعلقات کو سمجھنے کے قابل بناتا ہے۔

صفحات پلٹنے سے یہ سمجھنے میں مدد ملتی ہے کہ آپ کیا پڑھ رہے ہیں

 آپ جو کچھ پڑھ رہے ہیں وہ کتنا یاداشت میں رہتا ہے اس کا نحصار اس پر ہے کہ آپ کاغذ پر چھپی ہوئی پڑھ رہے ہیں یا ای بک۔

 آپ کی انگلیوں کے نیچے کاغذی صفحات کا احساس آپ کے دماغ کو کچھ سیاق و سباق فراہم کرتا ہے، اس طرح آپ جس موضوع کے بارے میں پڑھ رہے ہیں، اس کی گہرائی اور بہتر فہم کا باعث بن سکتا ہے۔

 الزائمر کی بیماری سے لڑنے میں مدد ملتی ہے

پڑھنا ایک دماغی سرگرمی ہے جو کہ صحت کے حوالے سے بہت ہی افادیت رکھتی ہے جو لوگ کتاب پڑھنے، شطرنج یا پہیلیاں جیسی سرگرمیوں کے ذریعے اپنے دماغ کو مشغول رکھتے ہیں ان میں الزائمر کے مرض میں مبتلا ہونے کا امکان ان لوگوں کی نسبت 2.5 گنا کم ہو سکتا ہے جو کم محرک سرگرمیوں میں اپنا وقت گزارتے ہیں۔

پڑھنا آپ کے آرام کا سبب بنتا ہے

ایک لمبے دن کے بعد ایک اچھی کتاب پڑھنا آپ کے شدید ذہنی تناؤ کو کم کرنے اہم کرادار ادا کرتا ہے۔

 یہ بات ایک تحقیق کے نتیجے میں سامنے آئی ہے۔

اس بات سے قطع نظر آپ کس موضوع پراور کونسی کتاب پڑھ رہے۔ اپنے آپ کو ایک اچھی اور دلفریب کتاب میں مشغول کر کے آپ روزمرہ کی  پریشانیوں اور تناؤ سے بچ سکتے ہیں اور مصنف نے کس سوچ کے ساتھ کتاب تحریر کی ہے اس تخیل میں کھو کرکچھ وقت گزارسکتے ہیں۔

سونے سے قبل پڑھنا فوری نیند میں مدد فراہم کرتا ہے

سونے سے قبل ایک اچھی کتاب پڑھنا نیند کے معیار کو بہتربنانے میں اہم کراداراداکرتا ہے۔

اس طرح آپ اسکرین سے دور رھ کر کچھ وقت حقیقی دنیا میں گزارتے ہیں جو دماغ کے سکون کا باعث بنتا ہے۔

 پڑھنا ایک سیکھنے والا عمل ہے

75 فیصد والدین کی خواہش ہے کہ ان کے بچے تفریح ​​کے لیے مزید پڑھیں، اور جو اپنے بچوں کو کتابی کیڑا بننے کی ترغیب دینا چاہتے ہیں وہ گھر میں اونچی آواز میں پڑھنا شروع کر سکتے ہیں۔
 جب کہ زیادہ تر والدین اپنے بچوں میں کتب بینی کی عادات  شورع ہونے کے بعد اس عمل کو چھوڑ سکتے ہیں۔

 ایک تحقیق کے مطابق بچوں کو ان کے ابتدائی تعلیمی سالوں کے دوران اونچی آواز میں پڑھنا انہیں اکثر پڑھنے کی جانب ترغیب دے سکتا ہے۔