کامیاب لوگ

 کامیاب لوگ
کامیاب لوگ

 کامیاب لوگ اپنے مقصد کے حصول کے لیے میں جو غلطیاں کرتے ہیں... ان سے  ہمیشہ سیکھتے ہیں، یہیں سے کامیابی کے راستے کا تعین ہو جاتا ہے وہ اپنی سستی کام چوری کی عادات پر کنٹرول رکھتے  ہوئے مستقل مزاجی سے آگے بڑھتے ہیں اور کامیاب ہو جاتے ہیں۔
کامیابی ایک ایسی گیند ہے جو قدرت ہر شخص کی طرف اچھالتی ہے‘ یہ آپ کے دماغ‘ ہاتھ یا آپ کے پاؤں کو چھو کر ضرور گزرتی ہے۔ یہ باسکٹ بال یا فٹ بال کی طرح ہے کہ اگر آپ کے پاس آ جائے تو یہ آپ کی مہارت ہے کہ آپ یہ گیند کتنی دیر اپنے پاس رکھتے ہیں اور گول میں پھینکنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں۔
کامیاب لوگوں کی بائیو گرافی پڑھیں تو ایک شخص بھی آپ کو ایسا نہیں ملے گا جو کہے کہ میں نے شروع میں وقت ضائع کیا اور آج تک مسلسل ضائع کر رہا ہوں ان کی کوشش ہوتی ہے اگر ان سے بولنے‘ لکھنے یا سمجھنے میں کوئی غلطی ہو گئی ہے‘ اگر وہ کسی میٹنگ میں غیر موزوں لباس پہن کر چلے گئے ہیں یا انہیں فلاں وقت فلاں جملہ نہیں بولنا چاہیے تھا تو وہ ان غلطیوں پر اصرار نہیں کرتے بلکہ ان کے دماغ کی ہارڈ ڈسک میں وہ بات محفوظ ہو جاتی ہیں اور جیسے ہی وہ لمحہ دوبارہ آتا ہے وہ اپنے آپ کو تیار کر لیتے ہیں اور ہر چیز ٹھیک ٹھیک انداز میں انجام دینے کی کوشش کرتے ہیں۔مثلاً اگر کسی کامیاب شخص نے کسی ملٹی نیشنل کمپنی میں نوکری کیلئے اپلائی کیا اور وہ انٹرویو والے دن ٹائی لگانا بھول گیا اور اسی وجہ سے وہ نوکری حاصل نہ کر سکا تو وہ دوبارہ ایسی حرکت نہیں کرے گا۔ جبکہ ناکام شخص سوچے گا کہ نوکری تو سفارش پر ہی ملنی ہے ‘ٹائی لگانے یا نہ لگانے سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔

اسی طرح اگر کوئی کاروباری شخص آج کسی بزنس ایمپائر کا مالک ہے تو وہ آپ کو بتائے گا اس سے شروع میں کیا غلطیاں ہوئیں ۔مثلاً ہو سکتا ہے کہ جب اس نے پہلا کاروبار شروع کیا ہو تو اس میں اس نے دیگر شعبوں پر تو سرمایہ کاری کی ہو لیکن اپنی پراڈکٹ کی مارکیٹنگ بالکل نہ کی ہو۔اس کی چیز بھی معیاری اور دیر پا ہو اور مارکیٹ میں موجود دیگر کمپنیوں سے بہتر بھی ہو لیکن چونکہ لوگوں کو اس کے بارے میں علم ہی نہیں تھا ‘ وہ اپنی مصنوعات کی تشہیر کے فیکٹر کو نظر انداز کرتا رہا ہو؛ چنانچہ اسے ابتدا میں اسی وجہ سے بھاری نقصان اٹھانا پڑا ہو۔
کامیاب لوگ جب بھی ناکام ہوتے ہیں تو وہ ان عوامل پر غور کرتے ہیں جن کی وجہ سے انہیں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ وہ اپنے سامنے لکھ کر دیوار پر کسی ایسی جگہ وہ غلطیاں لگا لیتے ہیں جہاں ان کی دن میں بار بار نظر پڑے اور ان کے ذہن نشین ہو جائے تاکہ کبھی غلطی سے بھی دوبارہ غلطی نہ ہو۔

کامیاب لوگ شروع سے ہی ایک معیار برقرار رکھنے اور اسے بہتر کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔کسی بھی ناکامی پر بلاوجہ یا عادتاً دوسروں کو مطعون کرنا یا ذمہ دار ٹھہرانا ایسی حماقت ہے جو لوگوں کو کامیابی سے روکتی ہے۔کسی کو ذمہ دار ٹھہراتے رہنے سے آپ وقتی طور پر تو خود کو سمجھا لیں گے لیکن اصل مسئلہ وہیں کا وہیں موجود رہے گا۔شارٹ کٹ ایک ایسی غلطی ہے جو ایسی لت کی طرح ہے جو لگ جائے تو پھرآپ کو کہیں کا نہیں چھوڑتی۔آپ دنیا کے کسی بھی کامیاب شخص کو دیکھ لیں‘ آپ کو اس میں شارٹ کٹ کہیں بھی دکھائی نہیں دے گا۔ بظاہر ایسا لگے گا کہ فلاں شخص تو بڑا کامیاب ہے‘ بڑے پیسے کماتا ہے‘ ٹی وی پر بڑے انٹرویوز دیتا ہے لیکن اس منزل تک پہنچنے میں اسے کتنا عرصہ لگا‘ اس نے کتنی چکی پیسی‘ یہ وہی شخص جانتا ہے۔
ہمارے ہاں بائیو گرافی لکھنے کا رجحان مغرب کی نسبت بہت کم ہے۔لیکن جتنی بھی دستیاب ہیں ان میں ہر کامیاب شخص کی ابتدائی زندگی آپ کو ایک مزدور ‘ ایک پیاسے طالب علم اور زندگی سے لڑنے والے شخص کی طرح دکھائی دے گی جو ہر پل ہر سانس اس مکڑی کی طرح دیوار پر چڑھنے کی کوشش کرتا ہے جو سینکڑوں بار نیچے گری او ربالآخر اوپر چڑھنے میں کامیاب ہو گئی۔

 ایک اور عادت جو کامیاب شخص کبھی نہیں دہراتے وہ دوسروں کو خوش کرنے کی کوشش کرتے رہنے کی ہے۔آپ ایک وقت میں ہر شخص کو کبھی بھی خوش نہیں رکھ سکتے۔ اس سے بہتر ہے آپ اپنے کام پر فوکس کر لیں‘ اس کا معیار اچھا کر لیں جس نے خوش ہونا ہو گا وہ ہو جائے گا اور جس نے جلتے کڑھتے رہنا ہے وہ آپ کی اسے خوش رکھنے کی مسلسل کوششوں کے باوجود جلتا کڑھتا رہے گا۔

ہمیشہ نیچرل رہیں، آپ جو نہیں ہیں اگر آپ وہ خود کو ظاہر کرنے کی کوشش کریں گے تو آپ بلاوجہ اپنی انرجی ضائع کر رہے ہیں۔ کامیاب لوگ جو ہوتے ہیں وہی دکھتے ہیں۔ مثلاً اگر آپ ایک بڑا کاروبار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن آپ چھوٹے سے فلیٹ میں رہتے ہیں تو یہ چھپانے کی ضرورت ہر گز نہیں اور یہ بتانا ضروری نہیں کہ میرا دو کنال کا بنگلہ ہے۔ اگر آپ نے کامیاب ہونا ہے تو دو مرلے کے فلیٹ سے بھی ہو جانا ہے۔ کامیابی آپ کی کوشش‘ آپ کے شوق اور جذبے سے جڑی ہے۔ اس کا آپ کی ذات‘ آپ کی رہائش سے کوئی لینا دینا نہیں۔آپ جتنا دکھاوے میں پڑیں گے اتنا ہی اصل راستے سے ہٹ جائیں گے۔

کامیاب لوگ اگر ایک مرتبہ کسی سے ایسی کمٹمنٹ کر لیتے ہیں کہ جسے پورا نہ کر پائیں تو دوبارہ ایسا نہیں کرتے۔ انہیں اچھی طرح علم ہوتا ہے کہ لوگوں کے پاس ان کو آزمانے کا وقت نہیں ہے۔اگر وہ آپ کی دکان سے ایک مرتبہ اس لئے مایوس لوٹتے ہیں کہ آپ مقررہ وقت میں انہیں چیز نہیں دے پائے تو وہ کسی اور دکان میں چلے جائیں گے جہاں انہیں فوری سروس ملے۔کوئی بھی آپکے دُکھ سننے کیلئے نہیں رکے گا۔اس لئے کبھی غلطی سے بھی ایک بار کوئی غلطی ہو جائے تو دہرانے سے باز رہیں۔چنانچہ غلطی یا نقصان ایک مرتبہ ہو گیا‘ دو مرتبہ ہو گیا‘ اسے درست کرنے کی کوشش کیجئے‘ماضی کی یادوں کو ڈیلیٹ کرتے جائیں اور کامیابیاں سمیٹتے جائیں۔